Tue 24 Jul 2012

عرصہ ہوا ایک ترک افسانہ پڑھا تھا یہ دراصل میاں بیوی اور تین بچوں پر مشتل گھرانے کی کہانی تھی جو جیسے تیسے زندگی گھسیٹ رہا تھا۔ جو جمع پونجی تھی وہ گھر کے سربراہ کے علاج معالجے پر لگ چکی تھی، مگر وہ اب بھی چارپائی سے لگا ہوا تھا۔ آخر اسی حالت میں ایک دن بچوں کو یتیم کر گیا۔ رواج کے مطابق تین روز تک پڑوس سے کھانا آتا رہا، چوتھے روز بھی وہ مصیبت کا مارا گھرانہ خانے کا منتظر رہا مگر لوگ اپنے اپنے کام دھندوں میں لگ چکے تھے، کسی نے بھی اس گھر کی طرف توجہ نہیں دی۔ بچے بار بار باہر نکل کر سامنے والے سفید مکان کی چمنی سے نکلنے والے دھویں کو دیکھتے۔ وہ سمجھ رہے تھے کہ ان کے لیے کھانا تیار ہو رہا ہے۔ جب بھی قدموں کی چاپ آتی انھیں لگتا کوئی کھانے کی تھالی اٹھائے آ رہا ہے مگر کسی نے بھی ان کے دروازے پر دستک نہ دی۔

 

ماں تو پھر ماں ہوتی ہے، اس نے گھر سے کچھ روٹی کے سوکھے ٹکڑے ڈھونڈھ نکالے، ان ٹکڑوں سے بچوں کو بہلا پھسلا کر سلا دیا۔ اگلے روز پھر بھوک سامنے کھڑی تھی، گھر میں تھا ہی کیا جسے بیچا جاتا، پھر بھی کافی دیر کی "تلاش" کے بعد دو چار چیزیں نکل آئیں جنھیں کباڑیے کو فروخت کر کے دو چار وقت کے کھانے کا انتظام ہو گیا۔ جب یہ پیسے بھی ختم ہو گئے تو پھر جان کے لالے پڑ گئے۔ بھوک سے نڈھال بچوں کا چہرہ ماں سے دیکھا نہ گیا۔ ساتویں روز بیوہ ماں خود کو بڑی سی چادر میں لپیٹ کر محلے کی پرچوں کی دکان پڑ جا کھڑی ہوئی، دکان دار دوسرے گاہکوں سے فارغ ہو کر اس کی طرف متوجہ ہوا، خاتون نے ادھار پر کچھ راشن مانگا تو دکان دار نے نا صرف صاف انکار کر دیا بلکہ دو چار باتیں بھی سنا دیں۔ اسے خالی ہاتھ ہی گھر لوٹنا پڑا۔

 

ایک تو باپ کی جدائی کا صدمہ اور اوپر سے مسلسل فاقہ، آٹھ سالہ بیٹے کی ہمت جواب دے گئی اور وہ بکھر میں مبتلا ہو کر چارپائی پر پڑ گیا۔ دوا دارو کہاں سے ہو، کھانے کو لقمہ نہی تھا، چاروں گھر کے ایک کونے میں دبکے پڑے تھے، ماں بخار سے آگ بنے بیٹے کے سر پر پانی کی پٹیاں رکھ رہی تھی، جب کہ پانچ سالہ بہن اپنے ننھے منے ہاتھوں سے بھائی کے پاؤں دبا رہی تھی۔ اچانک وہ اٹھی، ماں کے پاس آئی اور کان سے منہ لگا کر بولی

 

"اماں بھائی کب مرے گا؟"

 

ماں کے دل پر تو گویا خنجر چل گیا، تڑپ کر اسے سینے سے لپٹا لیا اور پوچھا "میری بچی، تم یہ کیا کہہ رہی ہو؟"

 

بچی معصومیت سے بولی

 

"ہاں اماں! بھائی مرے گا تو کھانا آئے گا ناں!"

 

اگر ہم اپنے پاس پڑوس میں نظر دوڑائیں تو اس طرح کی ایک چھوڑ کئی کہانیاں بکھری نظر آئیں گی۔ بہت معذرت کے ساتھ کہہ رہا ہوں ہمارا معاشرہ مردہ پرست ہو چکا ہے۔ زندگی میں کوئی نہی پوچھتا مگر دم نکلتے وقت ہونٹوں پر دیسی گھی لگا دیا جاتا ہے تا کہ لوگ سمجھیں بڑے میاں دیسی گھی کھاتے کھاتے مرے ہیں۔ غالبا منٹو نے لکھا ہے کہ ایک بستی میں کوئی بھوکا شخص آ گیا، لوگوں سے کچھ کھانے کو مانگتا رہا مگر کسی نے کچھ نہی دیا۔ بیچارہ رات کو ایک دکان کے باہر فٹ پتہ پر پڑ گیا۔ صبح آ کر لوگوں نے دیکھا تو وہ مر چکا تھا۔ اب "اہل ایمان" کا "جذبہ ایمانی" بیدار ہوا، بازار میں چندہ کیا گیا اور مرحوم کے ایصال ثواب کے لیے دیگیں چڑھا دی گئیں، یہ منظر دیکھ کر ایک صاحب نے کہا "ظالمو! اب دیگیں چڑھا رہے ہو، اسے چند لقمے دے دیتے تھ یہ یوں ایڑیاں رگڑ رگڑ کر نا مرتا"۔

 

 حضرت مجدد الف ثانی فرمایا کرتے تھے کہ تم جو چادریں قبر پر چڑھاتے ہو اس کے زندہ لوگ زیادہ حقدار ہیں۔ ایک شخص رکے ہوئے بقایاجات کے لیے بیوی بچوں کے ساتھ مظاہرے کرتا رہا، حکومت ٹس سے مس نا ہوئی، تنگ آ کر اس نے خود سوزی کر لی تو دوسرے ہی روز ساری رقم ادا کر دی گئی۔ اسی طرح ایک صاحب کے مکان پڑ قبضہ ہو گیا، بڑی بھاگ دوڑ کی مگر کوئی سننے کو تیار نہی ہوا، اسی دوران دفتر کی سیڑھیاں چڑھتے ہوئے اسے دل کا دورہ پڑا جو جان لیوا ثابت ہوا، پولیس نے پھرتی دکھائی اور دوسرے ہی دن مکان سے قبضہ ختم کروا دیا۔ فائدہ؟ کیا اب اس مکان میں اس کا ہمزاد آ کر رہے گا؟

 

کیا ہمارا "جذبہ ایمانی" صرف مردوں کے لیے رہ گیا ہے۔ اپنے ارد گرد موجود زندوں کا خیال رکھي

 

Categories : Thoughts / Lessons
E-mail this post to someone or Comments here
Mon 23 Jan 2012

Don't sell your memory card with your cell phone as it contain your photos and videos and other personal stuff which exists even after you delete it from your memory card or even after format. It can still be recoverable. So if you are selling your mobile then sell it without memory card. 

 

Dont+sell+memory+card+with+your+mobile+phone.jpg

Tags: ,
E-mail this post to someone or Comments (1)
Tue 8 Sep 2009
I'm hating you. It's all washed out of me. I hate people hard, because an intellectual hate is the worst"
01:32 28-Jul-11


~~~A Taste of Rumi (1)~~~
"When you do things from your soul, you feel a river moving in you, a joy.
When actions come from another section, the feeling disappears. 
Do not be satisfied with the stories that come before you. Unfold your own myth.
Reach for the rope of God. And what is that? Putting aside self-will."
~Rumi~
27-Jul-11


~~~A Taste of Rumi (2)~~~
Don't let others lead you. They may be blind or, worse, vultures.
Now see the invisible. If you could leave your selfishness, you would see how you've been torturing your soul. 
How could we know what an open field of sunlight is? Don't insist on going where you think you want to go. 
Ask the way to the spring. Your living pieces will form a harmony."
~Rumi~
27-Jul-11


Agar mughay pana hay to mugh may utar kar dekh
kinaray say samandar k raaz janay nahi jatay...
16-09-2010


"When I am with you, we stay up all night.
When you're not here, I can't go to sleep.
Praise God for those two insomnias!
And the difference between them.(Rumi)
15-May-2010


The harvest of my pain was its own peace and remedy (Rumi)
14-May-2010


somebody play for live, somebody live for play...
12-Sep-2009


hay shouq-e-safar aisa aik umer say yara 
Manzil bhi nahi pai, rasta bhi nahi badla...
07-Sep-2009


If you dont LOVE me so please HATE me but dont AVOID me!!
22-Jul-2009


I am not a quitter. I make my every failure bare witness of my following truimph...
13-Jul-2009


"How could you reach the pearl by only looking at the sea? If you seek the pearl, be a diver: the diver needs several qualities: he must trust his rope and his life to the Friend's hand, he must stop breathing, and he must jump." 
~ Jalaluddin Rumi
12-Jun-2009


Suffering is a gift. In it is hidden mercy.
~ Jalaluddin Roomi
11-Jun-2009

Categories : Thoughts / Lessons
E-mail this post to someone or Comments (4)
Fri 26 Jun 2009

Insaan Bhi kitna Ajeeb Hy,
Jab kisi Cheez se Darta Hy to Us se Dour Bhagta Hy.
Jab ALLAH Sy Darta Hy to Us k Or Qreeb Ho Jata Hy

==========

IKHTIYAR, TAAQAT aur DOULAT
aisi cheezain hain jin k milnay say log
badaltay nahin BAYNAQAB hotay hain

==========

kisi ki madad kartay waqt us k chehray ki janib mat daikho, ho sakta hay us ki sharminda ankhain tumharay dil main gharur ka beej bo dain

==========

Agr Tm Usy Na Pa Sako Jise Tm Chahte Ho,Tu Usy Zror Pa Lena Jo Tmhe Chahta Hy
QK Chahne Se, Chahe Jane Ka Ehsas Ziada Khubsurat Hota Hy.

==========

GHULAB KA PHOL BANO! KYUN K YEH PHOL US K HATH ME BHI KHUSHBO CHOR DAITA HAI JO ISEY MASAL KAR PHAINK DAITA HAI

==========

"Yeh na socho k ALLAH dua foran qabool kyun nahi karta,
yeh shukar karo k ALLAH hamaray gunaahon ki saza foran nahi deta.."

 

Categories : Thoughts / Lessons
E-mail this post to someone or Comments here
Wed 8 Apr 2009
Kal fursat na mili to kya karo ge,
 
Itni mohlat na mili to kya karo ge,
 
Roz kehte ho kal parhon ga Namaz,
 
Kal agar saans na rahi to kya karo ge...
 
Rasam se sunnat achi, 
 
Neend se Namaz achi, 
 
Gunah se neki achi,
 
Bazar se Masjid achi 
 
Fazool baton se Quraan ki tilawat achi,
 
Namaz jo hum par farz kar di gayi hai....  
 
Fajar....bister main
 
Zohar..naukri main
 
Asar.....chaye main
 
Maghrib...rastey main
 
Esha......tv main
 
Na Durood, Na Quran.... Yeh Kaisa Hai Musalman ?
 
Phir kahtay ho kyon nahin hai Allah hum par meharban!
 
Phir kyon nahi parhtay Namaz, Woh to hay hi mehraban
 
Pray before you expire
E-mail this post to someone or Comments here